Where you belong

*dibble dop dibble dop*

A drop at her muddy cheek.
The rain almost stopped but the wretchedness was still there in the air. She tried breathing but something heavy on her chest wasn’t letting her. The silver sky was fading now. She tried staring at it but her eyelids were heavier than her heart. She closed her eyes and wheezed. Her numb arm slipped through her thigh and was as on the grass now, sinking in water like an old abandoned boat; boat that has lost its worth.
A tear dropped off the corner of her eye, making its way through the mud on her face into her ear. All senses stopped as if they didn’t know what to do next. As if they never knew how to work. Everything stopped.

*dibble dop dibble dop*

A drop at her muddy cheek.
The rain started again. She opened her eyes and looked around. Lying outside a graveyard, she took a deep breath. The air was thickened with grief; more suffocating than before. She got up, and this time she wasn’t heavy at all. She was lighter than a candy floss.

Heading towards the gate she heard someone sobbing, but she saw no one there. The sound was probably coming from the other side. As soon as she took some more steps, the sound got louder and clearer. She saw the wet rusty gate half opened and pushed it. Its squeaking sound wasn’t more unpleasant than the continuous sobbing. She entered. It was all dark and gloomy. Even the moon could be heard silently mourning hidden behind black clouds. A few steps ahead she saw a girl. Sitting with her head down and arms wrapped around her legs. She was the one who made the air gloomier. She was the one mourning.

She went towards her and sat down. It was still raining. Heavier than before. She tried running her fingers through her dirty brown tangled hair. The girl stopped crying and looked up at her. She could barely see her face but she sure saw her half burnt side. That girl stood up and walked away. Disappearing in the heavy rain. 

She tried following her but tripped over something. It was too dark to figure out what was that. She sat there; frightened and waiting for the moon to stop hiding. She felt her heartbeat slowing down. It was getting harder to breathe. 

Hours later, the clouds thundered and it stopped raining all at once. The moon wasn’t hidden anymore. She looked up, and now she could see where she was sitting. Amid thousands of people, in the same position; heads down, arms around their legs, mourning silently. 

She stood up and looked around. It was a graveyard. Not for the dead, but for the abandoned and rejected ones. Every group of people had a gravestone reading its flaws.”The burnt ones”, she read on a gravestone behind that same girl as she was moving ahead. She kept moving finding her place. She came across hundreds of gravestones, but not even a single one defined her. She was beautiful. As perfect as one could be. She had crossed every stone, every flaw. It was the end of the graveyard. She didn’t know where to go now, so she sat against the wall and continued the ritual of mourning. A moment later, she felt someone near her but she didn’t stop. Someone placed a gravestone there and disappeared. Later, she looked up, saw the gravestone, and murmured
“The cursed ones”

 

Jadd mein andar jhaati paai…

Din ka ikhtatam bhi kuch ajeeb hi dhang se hota ha. Wo ek hi rang ka sooraj jo sara din asmaan par tika rehta ha, doobtay huay apnay tamaam rang aasmaan par bikhair deta ha. Rangon k is seher ko kbhi mehsoos kiya ha? Yahi pur-kashish seher mujhe roz is jheel k kinaray is narm ghaas par kheench lata ha. Meri nazrain roz udaasi or sukoon k is me’raaj ko dekhne yahan aajati hain.

Aaj bhi is narm ghaas par aankhen moondh k laitna or is shabnam ki khushboo ko mehsoos krna utna hi acha lgraha tha jitna saalon pehle lagta tha. Aaj bhi jheel k khaamosh paani se uthti 100 awaazain wese hi kaano mein mehsoos horahi theen jitni saalon pehle hoti theen. Aaj bhi nazrain asmaan par bikhray rangon k zer-e-asar wese hi theen jese salon pehle hua krti theen. Par aj kuch alag tha. Hawa mein ek khof tha. Wo khof jo koi raaz faash hojanay ka hota ha. Par aj kis par kiska raaz fash ho skta tha? Isi soch mein gum mein us narm geeli ghaas par apnay baazu phailaae laiti thi aur oopar urrtay parindon k us garoh ko dekh rahi thi jo apnay gharon ko laut raha tha, unhi mein se ek parinda neechay ki trf bohat tezi se ata mehsoos hua. Chnd hi lamhon mein wo aa kr mere pas gira. Tootay huay par ko musalsal phrpharata wo parinda bebasi ki kahani suna raha tha. Mein uthi or us ko dekha. Us ki aankhon mein mene bechaini dekhi, par un mein mujhe kisi se madad ki na umeed nazar i or na talaash. Mein usko zameen par apnay zakhm ko ragartay huay tou dekh rahi thi, par laakh dhoondnay par bhi mujhe uski aankhon mein mohtaaji nahi mili. Mene dekhi tou sirf bechaini.

Mene hath brha kr usko pakarna chaaha par mera aagay brhta wujood waheen tham gya. Uski aankhon mein mojood bechaini ab nafrat mein badalti saaf nazar arahi thi. Aaj itnay saalon mein pehli baar kuch tha jis ne meri nazrain aasmaan pe bikhray un rangon se hata kar khud ki taraf maail ki theen. Mein uski nazron mein na janay kya dekh rahi thi. Shaid us ki wo bechaini or bechaini se brh kr wo nafrat mujhe uljha rahi thi. Mujhe aas paas mojood sab kuch dhundla lagnay laga tha. Mein mazeed ulajhti ja rahi thi. Mera sun hota zehen 100 sawaalon mein ghira tha. Asmaan par oonchay se ooncha urnay wala parnida jo kisi bhi oonchaai se nahi ghbrata, zameen par q ghbra raha tha? Drd ki prwah kiyay bagair apnay tootay huay paron ko musalsal pharpharata wo akhir soch kya raha tha? Apnay zakhmon se uthti hui teson ki prwah kiye bagair wo musalsal dobara urr kr mujhse door janay ki koshish q kr raha tha? Wo akhir mujhse door q jana chahta tha? Ek dum sawaalon k is selaab se ek soch ubhar kr saamne i. Khamosh jheel ki wo 100 awaazain ab waqai khaamosh hogaeen. Ghaas per mojood shabnam ki mehek ab khoon ki boo jesi ho chuki thi. Hawa mein mehsoos hota wo raaz faash honay ka dar ab andar tak mehsoos honay laga tha. Shaid ehsaas honay laga tha k aj kis par kis ka raaz fash honay wala ha. Us parinday ki mujh par tiki wo nafrat bhari nazrain mujhe andar tak dekh rahi theen. Mujhe us se khof araha tha. Ek ajeeb c kapkapi taari horahi thi. Shaid usko mera baatin mehsoos horaha tha. Aaj us jheel k kinaray itnay saalon mein pehli baar mujhe ghutan horahi thi. Mein chahti thi k ab wo parinda waqai urr jae. Ab mein us parinday se door jana chahti thi. Us ki nazrain ab mujhe mere tamaam sawaalon ka jawab de rahi theen. Us ko bechaini us k zakhm ki drd se nahi, mere andar k chupay gunaahon ki syaahi ko dekh kr horahi thi. Mujhse door janay ki wajah ye nahi thi k usko apnay saathiyo k sath ja milna tha, wo tou mere andar ki mayoosi ki boo usko mere pas nahi rehne de rahi thi. Usko mujhse or mujhe us se mazeed ghutan horahi thi. Usko ghuttan mere baatin se horahi thi, or mujhe uski un sawaaliya nazron se jo mujhse hisaab maang rahi theen.

Sab kuch saakin tha. Meri soch jawab de chuki thi. Uski nazron mein mojood nafrat ab ek sawal nahi balkay aaina bn chuki thi. Ab sab saaf tha. Tamaam uljhanain sulajh rahi theen. Wo ab apnay par shiddat se pharphara raha tha. Uski nafrat ab khof mein badal rahi thi. Mene apnay ap ko us se door krna chaha par meri nazrain ab bhi us ki nazron mein theen. Wo hlka sa urra. mein heraan thi k itnay shadeed zakhm k bawajood esa kya tha jo us ko urnay ki himmat de raha tha. phir is aakhri sawal ka jawab bhi mujhe us ki nazron se mila. us ki nazron mein wo nafrat jo ab darr bn chuki thi, wo mere andar ki munaafiqat ki wajah se thi. or ye wo mujhse door janay ki shadeed chaahat hi thi jo usko urnay ki himmat de rahi thi. jatay huay us parinday ne mere baatin mein chupay raazon ko mujhper hi ayaan kr dia. wo apni koshish mein kamyaab tou hogya par wo jatay jatay mujhe nakaam kr gya. ek chota sa zakhmi parinda khud tou uth gya par mujhe mere hi andar kai darjay neechay gira gya.

دوسرا پہلو

میں اس معاشرے کا ایسا حصّہ ہوں جو شاید یہاں کی کسی بھی چیز سے خوش نہیں. نہ روایات سے، روایات بنانے والوں سے، اور نہ ہی ان روایات پر چلنے والوں سے. آج انہی روایات میں سے ایک کا ذکر کروں گی جو میرے لئے قابل نفرت ہے. ہمارے ہاں عورتوں کے معاملے میں شادی کو ایک بوجھ سے کم نہیں سمجھا جاتا. یعنی شادی ہوجاۓ تو وہ عورت سے “بیچاری عورت” بن جاتی ہے. اور کافی حد تک یہاں ایسا ہوتا بھی ہے. پر یہ بوجھ صرف عورت ذات تک محدود نہیں ہے. مرد بھی کچھ بوجھ رکھتے ہیں جن میں سے ایک وہ بوجھ جسکو میں نے اوپر روایت کہا. وہ یہ ہے کہ اس سے ماں اور بیوی میں برابر کا پیار اورذمہ داریاں بانٹنے کی امید کی جاتی ہے. اور اگر وہ ایسا نہ کر پاۓ تو اسکو احمق سمجھا جاتا ہے. ماں کی طرف پیار اور ذمہ داری زیادہ نبھا لے تو “ماں کا پلّو پکڑ کر چلنے والا نا مرد” اور اگر یہ جھکاؤ بیوی کی طرف زیادہ ہو تو “زن مرید نا مرد” تصور کیا جاتا ہے. یعنی کہ دونوں صورتوں میں سوال اسکی مردانگی پر آتا ہے.
اب اس معاملے کو لے کر دو باتیں میرے ذہن میں آتی ہیں.
پہلی یہ کہ کیا آپ کو نہیں لگتا مرد اور ترازو میں فرق ہوتا ہے؟ یا ایسا ہے کہ اس کے پاس کوئی آلہ ہے جس پر لکھا آجاۓ کہ آج بیوی کی طرف جھکاؤ زیادہ ہوگیا ہے یا آج ماں کو زیادہ وقت دے بیٹھا ہے؟
دوسری بات یہ کہ میرے نزدیک ماں اور بیوی کو برابر پہ رکھنا اپنے آپ میں ہی جہالت ہے. نہیں؟ مطلب دونوں ہی عورت ذات، جس میں حسد کا مادہ ذرا زیادہ ہوتا ہے. اور دونوں کے ہی دل کے قریب وہ مرد. ایک کے دل میں اس کا بیٹا اور ایک کے دل میں اس کا شوہر. میرے مطابق سب مسائل یہیں سے شروع ہوتے ہیں. یہیں سے اس ماں اور بیوی کے دل میں ایک دوسرے کو لے کر مقابلہ شروع  ہوتا ہے اور حسد پیدا ہوتا ہے.
اب یہی اگر ماں کو ماں کا وہ درجہ دیا جاۓ جو الله نے اس کے لئے چنا ہے اور بیوی کو اس کے ساۓ میں ایک نئی بیٹی کا درجہ دیا جاۓ جو الله نے ایک بیٹی کے لئے رکھا ہے تو کیا کبھی یہ رشتہ آسانی سے آلودہ ہو سکتا ہے؟
یہاں ذمہ داری مرد کی ہے، پر صرف مرد کی نہیں، عورت کی بھی ہے. پھر چاہے وہ ماں ہو یا بیوی. رشتے کبھی بھی مقابلہ کر کے یا حق جتا کر بنتے نہیں بلکہ ٹوٹتے ہیں. اگر الله کے بناۓ ہوئے اصول اور حدود میں اپنی اپنی جگہ رہا جاۓ تو طلاق جیسا نا پسندیدہ عمل اتنا عام نہ ہو. نہ بیوی اپنے عھدے سے اوپر بڑھ کر ماں کے ساتھ کھڑی ہو اور نہ ہی ماں اپنے عہدے سے نیچے آ کر بیوی کے مقابلے پر کھڑی ہو.
مرد کی غلطی وہاں ہے جہاں وہ اپنی ذمہ داری سے ہٹ کر ان دونوں کو ان کے معاملات میں ٹکریں مارنے کے لئے چھوڑ دیتا ہے اور آخر کار اگر تباہی نہ بھی ہو تب بھی کچھ نہ کچھ خرابیاں آ ہی جاتی ہیں.
پھر بات وہیں آجاتی ہے کہ عقل تو سب رکھتے ہیں پر ہمّت اور عمل کوئی کوئی کرتا ہے. لیکن کم از کم اس عجیب سی روایت کو بنانے اور اس پر عمل کرنے والوں کو یہ بات ذہن میں رکھنی چاہئیے کہ الله نے برابر کے حقوق، پیار اور توجہ دو، تین یا چار بیویوں میں بانٹنے کا حکم دیا ہے. ماں اور ایک بیوی کے درمیان میں نہیں. اس لئے انکو برابر کھڑا کر کے رشتے بگاڑنے کے بجاۓ اگر انکو اپنی اپنی جگہ پر رکھ کر الگ الگ حقوق پورے کیے جایًیں تو شاید سکون کا کوئی راستہ نکل آۓ.

سراب

ok

کہا جاتا ہے کہ انسان اشرف المخلوقات ہے. تمام مخلوقات سے افضل. اور اسکی وجہ یہ ہے کہ وہ عقل رکھتا ہے، ہر چیز کی سمجھ رکھتا ہے. لیکن اگر انسان اتنا ہی عظیم اور دانش ہے تو اس میں سکون کی کمی کیوں ہوتی ہے؟ ہر فتنہ ہر فساد اسی کی وجہ سے کیوں ہوتا ہے؟ شیطان اسی پر حاوی کیوں ہوتا ہے؟
“کبھی کسی بے چین انسان میں جھانک کر دیکھیں، ان تمام سوالات کا ایک ہی جواب پائیں گے. “خواہش
کہنے کو تو یہ صرف ایک ادنیٰ سا لفظ ہے پر یہی ایک لفظ اس اشرف المخلوقات کو اس کے عھدے سے نیچے گرا دیتا ہے. انسان میں سکون کی کمی بھی اسی چھوٹے سے لفظ میں چھپی ہوئی ہے. اسی کی وجہ سے انسان کئی بار اسے نقصان کا سامنا کر بیٹھتا ہے جس کی تکلیف کا اندازہ شاید اس کے یا اس کے رب کے علاوہ کوئی نہیں لگا سکتا.
انسان کو ہوۓ نقصان کا تعلق خواہش کے چھوٹے یا بڑے ہونے سے نہیں ہوتا، اس کا تعلق خواہش کی شدّت سے ہوتا ہے. باز اوقات بڑی بڑی خواہشات پر انسان ہار مان جاتا ہے اور باز اوقات کسی چھوٹی سی خواہش کو اپنی زندگی کا مقصد بنا لیتا ہے.
ذرا تجزیہ کیا جاۓ تو پتا چلتا ہے کہ انسان ہمیشہ کسی نہ کسی چیز کا بھوکا ہوتا ہے. ماں کہتی ہیں کہ کبھی کبھی سو سال کا بھوکا ایک دن میں سیر ہوجاتا ہے، پر کبھی کبھی ایک دن کا بھوکا سو سال میں بھی سیر نہیں ہو پاتا. کیونکہ بات بھوک کی ہوتی ہی نہیں ہے، بات تو اسکی خواہش کی ہوتی ہے جو بھوک پر حاوی ہو کر اسکو حرص بنا دیتی ہے. اورپتہ ہے انسان کی بھوک اور حرص ختم کیوں نہیں ہوتی؟ کیوں کہ وہ اپنی خواہشات پر پلتا ہے. اور خواہش سے ہمیشہ بھوک بڑھتی ہے. پھر خواہش چیز کی ہو یا کسی انسان کی، وہ اس کے حصول کے لئے حیوان بھی بن سکتا ہے اور حیوان سے آگے آدم خور بھی. وہ انسانیت، اقدار سب بھلا سکتا ہے. صرف ایک ہلکی سی خواہش جاگنے کی دیر ہوتی ہے اور انسان گدھ کی خصلت اختیار کرلیتا ہے. جیسے گدھ کسی کی موت کا انتظار کرتا ہے نہ تاکہ خود کو پال سکے؟ ایسے ہی خواہش کے پیچھے بھاگنے والا بھی انتظار کرتا ہے ہر اس چیز کی موت کا، جو اس کے اور اس کی خواہش کے حصول کے درمیان آتی ہے.
میں نے خواہشات کو ہمیشہ سراب کی طرح پایا ہے اور انسان کو ازلوں سے بھٹکتے پیاسے کی مانند جو اپنی ساری زندگی اسی سراب کے پیچھے بھاگتے ہوۓ گزار دیتا ہے. کچھ پیاسے اس سراب تک پہنچنے کی کوشش میں ہی موت سے جا ملتے ہیں، اور کچھ آخر کار اس کی حقیقت جان لیتے ہیں.
پر جیسا میں نے کہا کہ انسان کی فطرت سے برا میں نے اس دنیا میں کچھ نہیں دیکھا، مطمئن ہونا ہر انسان میں پایا ہی نہیں جاتا. جب خواہش کرتا ہے تو ہر حد پار کر کے اس کی شدّت میں اپنا آپ گنوانے کو تیار ہوجاتا ہے اور جب اسکو پا لیتا ہے تو اگلے ہی لمحے اسکی قدر بھول جاتا ہے. پھر اسکو یاد آتا ہے کہ جس خواہش کو ایک وقت میں اس نے پالا تھا، اسی خواہش نے پلنے کے بعد خود کو طاقتور کر لیا کے اس کو کمزور کر کے اپنی قید میں کرلیا.
اسی خواہش نے ایک وقت میں قابیل کو قاتل بنا دیا تھا، اور نہ جانے قیامت تک کتنوں کو یہ خواہش اپنے زیر اثر رکھ کر قابیل بناتی رہے گی.
پر المیہ یہ ہے کہ انسان آخر انسان ہے. وہ سب جاننے کے بعد بھی خواہش کرنا نہیں چھوڑتا اور نہ ہی چھوڑے گا. اور شاید، یا یقینن، میں اتنا سب لکھنے اور آپ اتنا سب جاننے کے باوجود کبھی خواہش کرنا نہیں چھوڑیں گے. کیونکہ انسان جتنا بھی خود سے بھاگ لے، آخر کار رہتا وہ اپنی فطرت کی قید میں ہی ہے.

Hello winter!

It’s cold again. The time when, finally, my crave ends. The time when my old hoodies, jeans and boots come out to live the loveliest time of the year with me. The time when I walk on the dried maple leaves to end my temptation of the sound they make.The time when I place my favorite coffee mug beside the books on the wooden study table near this rusty window. The time when the aroma of hot cocoa is in the air, making it more crisp. The time when I blow the dust off my typewriter to pour my heart out to it. But this time, it’s not only about some boots or mugs. This time it’s not about what I have. This time, it’s all about something that’s missing. This time, it’s all about something that perhaps I never had. Something that I see in everything. Might it be the dreams in the cold mid-nights or my reflection in the foggy mirror. Might it be my warm breaths or the beats of my icy cold heart. It’s all around me. This winter, it’s all about some thoughts. Thoughts, that are to me what ink is to writer and chords are to guitar, what breath is to dying and smoke is to cigar. This winter, it’s all about some heart aching memories. Memories, that are to me what white is to calm and pink is to bloom, what red is to passion and black is to gloom. This winter, I don’t crave for anything but that something. This winter, it’s not about me. It’s not about anything…but you. 

-Just you and me

“Let’s lie in here, and make some wish

Satisfy what we have in our chests

Build up nothing but memories

Let’s dive into fantasy, and dream a little”

We’d row the boat

Among snow white swans

In a lake so far

Just you and me

We’d get wet in the rains

Amidst the fog

In the woods so far

Just you and me

We’d dance in the dark

To the beats of our hearts

In the streets so far

Just you and me

We’d fly in the clouds

High and high

In the skies so far

Just you and me

“We’d live what we want, and do it all

Learning from each other, growing in love

And when we’d realize that it’s all a dream

We’d lie in here, side by side again”

We’d cry ourselves to sleep

With hands in hands

In a hut so far

Just you and me

جتھے نہ کوئی منگے تینوں اوتھے ہی ھون بجائیاں

نوں مہینے چک کے بھار آخر کرن وڈائیاں

نہ کوئی تینوں سینے لاوے نہ ونڈیاں جان مٹھائیاں

ہر کوئی آ کے دکھ کرے تے برتے لا پروائیاں

رو رو کٹیا بچپن سارا وچ جوانی گئی ستائیاں

ساری جند وچ چار دیواری !کاہنو بھیجیا؟ سائیاں

اک ویلے لئ جین نوں ترسی ہن کر لے جو بن پائیاں

بھر بھر اکھاں پا کے کجلا پیر پازیب چڑھائیاں

ہمت کر کے، ٹپ کے بوہا نظراں جگ وکھائیاں

تیز ہوا، تے گلی مٹی سنگھ کے پیاس بجھائیاں

ویکھن تیرا چہرہ ہسدا جناں توں ساں لکائیاں

رجن نہ او تک تک تینوں اکھاں رج ترسائیاں

ڈھل جاۓ سورج،پئے ہنیرا گھر جائیں وچ شدائیاں

نیلوں نیل این اتوں تھلے لالوں لال کلائیاں

آپے توں گدھ کر لۓ کٹھیاں ہن نہ دئیں دہائیاں

نکڑ پھڑ، تے لک کے اوتھے رب نوں دے صدائیاں

جد توں فرق نہ رکھیا وچ عمل دے دنیا کی ریتاں بنائیاں؟

مرد دی عزت کدی نہ جاوے ساڈیاں جاون ڈھائیاں

وچ بازار جائیے چیرے پھاڑے کوئی نہ دوے گواہیاں

کھا کے کسے دی عمر دی پونجی کتھے نہ جان وڈیائیاں

لٹدے ویلے کوئی نہ سوچے کنج کوئی کرے کمائیاں

کڑی کدے نئی جیندی، فیر توں کادیاں ضدان لائیاں؟