سراب

ok

کہا جاتا ہے کہ انسان اشرف المخلوقات ہے. تمام مخلوقات سے افضل. اور اسکی وجہ یہ ہے کہ وہ عقل رکھتا ہے، ہر چیز کی سمجھ رکھتا ہے. لیکن اگر انسان اتنا ہی عظیم اور دانش ہے تو اس میں سکون کی کمی کیوں ہوتی ہے؟ ہر فتنہ ہر فساد اسی کی وجہ سے کیوں ہوتا ہے؟ شیطان اسی پر حاوی کیوں ہوتا ہے؟
“کبھی کسی بے چین انسان میں جھانک کر دیکھیں، ان تمام سوالات کا ایک ہی جواب پائیں گے. “خواہش
کہنے کو تو یہ صرف ایک ادنیٰ سا لفظ ہے پر یہی ایک لفظ اس اشرف المخلوقات کو اس کے عھدے سے نیچے گرا دیتا ہے. انسان میں سکون کی کمی بھی اسی چھوٹے سے لفظ میں چھپی ہوئی ہے. اسی کی وجہ سے انسان کئی بار اسے نقصان کا سامنا کر بیٹھتا ہے جس کی تکلیف کا اندازہ شاید اس کے یا اس کے رب کے علاوہ کوئی نہیں لگا سکتا.
انسان کو ہوۓ نقصان کا تعلق خواہش کے چھوٹے یا بڑے ہونے سے نہیں ہوتا، اس کا تعلق خواہش کی شدّت سے ہوتا ہے. باز اوقات بڑی بڑی خواہشات پر انسان ہار مان جاتا ہے اور باز اوقات کسی چھوٹی سی خواہش کو اپنی زندگی کا مقصد بنا لیتا ہے.
ذرا تجزیہ کیا جاۓ تو پتا چلتا ہے کہ انسان ہمیشہ کسی نہ کسی چیز کا بھوکا ہوتا ہے. ماں کہتی ہیں کہ کبھی کبھی سو سال کا بھوکا ایک دن میں سیر ہوجاتا ہے، پر کبھی کبھی ایک دن کا بھوکا سو سال میں بھی سیر نہیں ہو پاتا. کیونکہ بات بھوک کی ہوتی ہی نہیں ہے، بات تو اسکی خواہش کی ہوتی ہے جو بھوک پر حاوی ہو کر اسکو حرص بنا دیتی ہے. اورپتہ ہے انسان کی بھوک اور حرص ختم کیوں نہیں ہوتی؟ کیوں کہ وہ اپنی خواہشات پر پلتا ہے. اور خواہش سے ہمیشہ بھوک بڑھتی ہے. پھر خواہش چیز کی ہو یا کسی انسان کی، وہ اس کے حصول کے لئے حیوان بھی بن سکتا ہے اور حیوان سے آگے آدم خور بھی. وہ انسانیت، اقدار سب بھلا سکتا ہے. صرف ایک ہلکی سی خواہش جاگنے کی دیر ہوتی ہے اور انسان گدھ کی خصلت اختیار کرلیتا ہے. جیسے گدھ کسی کی موت کا انتظار کرتا ہے نہ تاکہ خود کو پال سکے؟ ایسے ہی خواہش کے پیچھے بھاگنے والا بھی انتظار کرتا ہے ہر اس چیز کی موت کا، جو اس کے اور اس کی خواہش کے حصول کے درمیان آتی ہے.
میں نے خواہشات کو ہمیشہ سراب کی طرح پایا ہے اور انسان کو ازلوں سے بھٹکتے پیاسے کی مانند جو اپنی ساری زندگی اسی سراب کے پیچھے بھاگتے ہوۓ گزار دیتا ہے. کچھ پیاسے اس سراب تک پہنچنے کی کوشش میں ہی موت سے جا ملتے ہیں، اور کچھ آخر کار اس کی حقیقت جان لیتے ہیں.
پر جیسا میں نے کہا کہ انسان کی فطرت سے برا میں نے اس دنیا میں کچھ نہیں دیکھا، مطمئن ہونا ہر انسان میں پایا ہی نہیں جاتا. جب خواہش کرتا ہے تو ہر حد پار کر کے اس کی شدّت میں اپنا آپ گنوانے کو تیار ہوجاتا ہے اور جب اسکو پا لیتا ہے تو اگلے ہی لمحے اسکی قدر بھول جاتا ہے. پھر اسکو یاد آتا ہے کہ جس خواہش کو ایک وقت میں اس نے پالا تھا، اسی خواہش نے پلنے کے بعد خود کو طاقتور کر لیا کے اس کو کمزور کر کے اپنی قید میں کرلیا.
اسی خواہش نے ایک وقت میں قابیل کو قاتل بنا دیا تھا، اور نہ جانے قیامت تک کتنوں کو یہ خواہش اپنے زیر اثر رکھ کر قابیل بناتی رہے گی.
پر المیہ یہ ہے کہ انسان آخر انسان ہے. وہ سب جاننے کے بعد بھی خواہش کرنا نہیں چھوڑتا اور نہ ہی چھوڑے گا. اور شاید، یا یقینن، میں اتنا سب لکھنے اور آپ اتنا سب جاننے کے باوجود کبھی خواہش کرنا نہیں چھوڑیں گے. کیونکہ انسان جتنا بھی خود سے بھاگ لے، آخر کار رہتا وہ اپنی فطرت کی قید میں ہی ہے.

Advertisements

Hello winter!

It’s cold again. The time when, finally, my crave ends. The time when my old hoodies, jeans and boots come out to live the loveliest time of the year with me. The time when I walk on the dried maple leaves to end my temptation of the sound they make.The time when I place my favorite coffee mug beside the books on the wooden study table near this rusty window. The time when the aroma of hot cocoa is in the air, making it more crisp. The time when I blow the dust off my typewriter to pour my heart out to it. But this time, it’s not only about some boots or mugs. This time it’s not about what I have. This time, it’s all about something that’s missing. This time, it’s all about something that perhaps I never had. Something that I see in everything. Might it be the dreams in the cold mid-nights or my reflection in the foggy mirror. Might it be my warm breaths or the beats of my icy cold heart. It’s all around me. This winter, it’s all about some thoughts. Thoughts, that are to me what ink is to writer and chords are to guitar, what breath is to dying and smoke is to cigar. This winter, it’s all about some heart aching memories. Memories, that are to me what white is to calm and pink is to bloom, what red is to passion and black is to gloom. This winter, I don’t crave for anything but that something. This winter, it’s not about me. It’s not about anything…but you. 

-Just you and me

“Let’s lie in here, and make some wish

Satisfy what we have in our chests

Build up nothing but memories

Let’s dive into fantasy, and dream a little”

We’d row the boat

Among snow white swans

In a lake so far

Just you and me

We’d get wet in the rains

Amidst the fog

In the woods so far

Just you and me

We’d dance in the dark

To the beats of our hearts

In the streets so far

Just you and me

We’d fly in the clouds

High and high

In the skies so far

Just you and me

“We’d live what we want, and do it all

Learning from each other, growing in love

And when we’d realize that it’s all a dream

We’d lie in here, side by side again”

We’d cry ourselves to sleep

With hands in hands

In a hut so far

Just you and me

جتھے نہ کوئی منگے تینوں اوتھے ہی ھون بجائیاں

نوں مہینے چک کے بھار آخر کرن وڈائیاں

نہ کوئی تینوں سینے لاوے نہ ونڈیاں جان مٹھائیاں

ہر کوئی آ کے دکھ کرے تے برتے لا پروائیاں

رو رو کٹیا بچپن سارا وچ جوانی گئی ستائیاں

ساری جند وچ چار دیواری !کاہنو بھیجیا؟ سائیاں

اک ویلے لئ جین نوں ترسی ہن کر لے جو بن پائیاں

بھر بھر اکھاں پا کے کجلا پیر پازیب چڑھائیاں

ہمت کر کے، ٹپ کے بوہا نظراں جگ وکھائیاں

تیز ہوا، تے گلی مٹی سنگھ کے پیاس بجھائیاں

ویکھن تیرا چہرہ ہسدا جناں توں ساں لکائیاں

رجن نہ او تک تک تینوں اکھاں رج ترسائیاں

ڈھل جاۓ سورج،پئے ہنیرا گھر جائیں وچ شدائیاں

نیلوں نیل این اتوں تھلے لالوں لال کلائیاں

آپے توں گدھ کر لۓ کٹھیاں ہن نہ دئیں دہائیاں

نکڑ پھڑ، تے لک کے اوتھے رب نوں دے صدائیاں

جد توں فرق نہ رکھیا وچ عمل دے دنیا کی ریتاں بنائیاں؟

مرد دی عزت کدی نہ جاوے ساڈیاں جاون ڈھائیاں

وچ بازار جائیے چیرے پھاڑے کوئی نہ دوے گواہیاں

کھا کے کسے دی عمر دی پونجی کتھے نہ جان وڈیائیاں

لٹدے ویلے کوئی نہ سوچے کنج کوئی کرے کمائیاں

کڑی کدے نئی جیندی، فیر توں کادیاں ضدان لائیاں؟

Searing echos

Backyard times
and warm bear hugs
Rose petals 
and lady bugs

Cold evenings
and infinite talks
Soft cuddles 
and slow walks

Plush pillows
and endless giggles
Pop songs 
and silly wiggles

Gentle rains
and long eves
Pleasant air
and maple leaves

Moonlit sky
and gloomy night
Tugged into past
and blur watery sight

Heavy heart
and aching mind
She closed her eyes
and wished she was blind

The Midnight Allure

2 am.

The only thing visible in the room was her face; glowing in the screen light of her laptop. Sitting stock-still, holding her breath, probably reading something. Squeezing her eyes after every couple of seconds to avoid blurriness her tears were creating. Scrolling up and down reading with weary, yet insomniac eyes, reading each and every word, she was feeling every single feeling that night.

3:30 am

She closed the lid, and moved to the bed with trembling legs; burdened by her own agitation. Her heart was fatigued with unknown fears, and mind was numb with the clump of thoughts
“What if every word he ever wrote was for me? What if I were the one he thinks about when writing?”
The night, like every other night of the past 2 years, was hard to breathe. With all heavy eyelids she was lying in the bed, thinking of how she was losing him with every passing breath.

As soon as the sight blurred, she felt something. A touch on her waist, softer than a new born’s skin, a waft near her ear causing goosebumps. She turned back and all she could see were two eyes; his eyes; as dead as hers. The grasp on her waist was hard now. He rubbed his hard cheek against her rosy cheek to wipe away the tear drop. The grasp, now, was harder. His every warm breath was curing her slashed soul. She was trying hard to forcefully open her loaded eyes, but he shut them with a gentle kiss.

“But…who are you?”*

9 am

The heaviness was not there in her eyes anymore. She opened them in the sun rays touching her tenderly. Everything was smooth now. The wounds seemed to heal. As if someone sucked all her torment off; she felt no agony in her. And wait, she was not amazed. Perhaps, she remembered nothing but the last whisper.

*”A Substitute” 

 

Unwise, she was.

Skinny face
Sharp collarbones
Boned waist
And tan legs

Messy hair
Smeared kohl
Silver nose stud
And broad chapped lips 

This is what she was
Misplaced
Tense
And, nasty

Never, she desired 
To be appealing 
All she ever wished 
Was to be

The melancholia
Causing him hate every part of him
 The madness
Making him adore imperfect existence of hers

A haze
Causing light trance to him
A sweet venom 
Slowly poisoning him to death

Everything
That made him a man
Everything
That existed in him